Official Website

تحریک عدم اعتماد: ایم کیوایم اپوزیشن کا حصہ بن گئی، باضابطہ اعلان آج ہوگا

40

اسلام آباد: متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان نے طویل مشاورت اور معاہدہ تیار ہونے کے بعد اپوزیشن کی حمایت کا فیصلہ کرلیا۔ اس کےبعد تحریکِ عدم اعتماد کے ضمن میں اپوزیشن کا پلڑا واضح طور پر بھاری ہوگیا ہے۔ 

 مطابق ایم کیوایم پاکستان اور اپوزیشن کے درمیان تحریری معاہدہ طے پا گیا ہے، جس کو دو حصوں یعنی  وفاقی اور صوبائی سطح پر بنایا گیا ہے۔

اس ضمن میں ایک معاہدہ طے کیا گیا ہے جس کی توثیق پاکستان پیپلز پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کرے گی، پھر آج دو بجے ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی معاہدے پر غور اور توثیق کرے گی۔ اس کے بعد شام چار بجے پریس کانفرنس میں اس کی تفصیلات بتاتے ہوئے ایم کیوایم باضابطہ طور پر اپوزیشن کا ساتھ دینے کا اعلان بھی کرے گی۔

اس سے قبل اسلام آباد کے پارلیمنٹ لاجز میں اپوزیشن رہنماؤں میں تبادلہ خیال جاری تھا جس کے بعد پہلے کہا گیا کہ کچھ دیر میں پریس کانفرنس میں اس کا اعلان کیا جائے گا لیکن بعد میں کہا گیا کہ ایم کیوایم کی شمولیت اور اس کے بعد کے لائحہ عمل کا اعلان آج شام میں ایک پریس کانفرنس میں کیا جائے گا۔

رات ڈھائی بجے پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اپنی ٹویٹ میں کہا ہے کہ متحدہ اپوزیشن اور ایم کیو ایم کے درمیان معاہدہ ہوچکا ہے۔

عین بلاول بھٹو زرداری کی ٹویٹ کے بعد ، ایم کیوایم رہنما فیصل سبزواری نے بھی اپنی ٹویٹ میں اس کی تصدیق کی ہے۔ جس میں انہوں نے آج شام چار بجے پریس کانفرنس میں اس کے باضابطہ اعلان کا ذکر کیا ہے۔

ایم کیو ایم پاکستان اور اپوزیشن کی جانب سے آج معاہدے پر دستخط کے لیے حزبِ اختلاف کے تمام اہم سربراہ موجود تھے، اپوزیشن کی جانب سے آصف  علی زرداری، شہباز شریف اور مولانا فضل الرحمان نے دستخط کئے۔

ذرائع کے مطابق اس معاہدے کو حتمی نتیجے پر پہنچانے کے لیے اپوزیشن کا ایک بڑا وفد پارلیمنٹ لاجز پہنچا تھا، جس میں خواجہ آصف، سعد رفیق، نوید قمر، شیری رحمان، اختر مینگل، مولانا غفور حیدری، وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ، مرتضی وہاب، سعید غنی سمیت دیگر شامل تھے۔

اپوزیشن رہنما مولانا فضل الرحمان، شہباز شریف اور آصف علی زرداری بطور ضامن معاہدے پر دستخط کئے اور بلاول بھٹو زراداری بھی موجود تھے۔

ذرائع نے بتایا کہ ایم کیو ایم کو اپوزیشن نے یقین دلایا ہے کہ ان کے تین اہم مطالبات جھوٹے مقدمات کی واپسی، لاپتا افراد کی بازیابی اور بند دفاتر کھولنے پر جلد مرحلہ وار عمل در آمد شروع کردیا جائے گا جبکہ سندھ کے شہری علاقوں میں بلدیاتی اداروں میں ایم کیو ایم کے ایڈمنسٹیٹرز کی تقرری فوری کی جائے گی جبکہ  سندھ لوکل گورنمٹ آرڈیننس میں قانونی طور پر تبدیلیاں کی جائیں گی۔

اس سے قبل ایم کیو ایم کی اعلی قیادت سے حکومتی وفد نے  پرویز خٹک کی سربراہی میں ملاقات  ہوئی جس میں علی زیدی اور گورنر سندھ بھی شامل تھے، یہ ملاقات صرف 10 منٹ جاری رہی۔ علی زیدی کا کہنا تھا ایم کیو ایم سے بات چیت جاری ہے آج ملاقات ہوگی۔