Official Website

پاسپورٹ کی مدت ختم ہونے پر نواز شریف کو لندن سے نکالا جائے گا

44

صوبائی وزیر جیل خانہ جات فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ نواز شریف پاکستان واپس نہیں آرہے بلکہ ان کے پاسپورٹ کی مدت ختم ہو چکی ہے رانا شمیم کا ایشو بھی لندن میں سیاسی پناہ حاصل کرنے کے لئے اٹھایاگیا تھا اب پاسپورٹ کی مدت ختم ہونے پر نواز شریف کو لندن سے نکالا جائے گا اور اگر وہ واپس پاکستان آئے بھی توکسی شان و شوکت سے نہیں آئیں گے بلکہ یہاں کی جیلیں انکا انتظار کر رہی ہیں 3سال کے دوران اپنے حلقے میں 2ارب روپے کے لگ بھگ ترقیاتی منصوبے مکمل کروانے کے ساتھ جیلوں میں بھی انقلابی اقدامات کئے جیلوں کے ساتھ اپنے حلقے میں انقلابی اقدامات میں کامیابی کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ میں بیوروکریسی یا افسران سے ”نہ“ سننے کا عادی نہیں اپنی3سالہ کارکردگی پر اظہار تشکر اور آمدہ بلدیاتی انتخابات کے لئے ”عوام رابطہ مہم کے حوالے سے کل (بروز جمعرات) دن 01:00بجے ڈھوک کالاخان سے ریلی نکالی جائے گی جو پورے حلقے کا چکر لگا کر پبلک سیکریٹریٹ پر اختتام پذیر ہو گی پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کے موقع پر کے پی کے کی تاریخ نہیں دہرائی جائے گی بلکہ لال حویلی کے ساتھ مل کر باہمی مشاورت اور اتفاق رائے سے راولپنڈی بلدیات میں بھی کلین سویپ کریں گے انہوں نے کہا کہ عوام رابطہ مہم کے لئے یہاں مستقل سیکریٹریٹ قائم کر دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ یہ صرف ”پبلک سیکریٹریٹ“ نہیں بلکہ فیاض الحسن چوہان کا”آستانہ عالیہ چوہانیہ“ ہے جہاں سے لال حویلی اور دھمیال ہاؤس کے کارکنان بھی فیض لے کر جاتے ہیں اور میری کوشش ہوتی ہے کہ کسی بھی کام کی گرض سے آنے والا کوئی شہری خالی واپس نہ جائے ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کے روز صادق آباد میں اپنے پبلک سیکریٹریٹ میں راولپنڈی کے صحافیوں کے اعزاز میں دیئے گئے ظہرانہ کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر یونین کونسل 27کے چیئر مین الحاج اظہر اقبال ستی بھی موجود تھے فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان کے وژن اور وزیراعلی پنچاب سردار عثمان بزدار کی قیادت صوبائی وزیر جیل خانہ جات کی بھاری ذمہ داری کے ساتھ اور وعدوں کی تکمیل کے ساتھ تبدیلی کا سفر کامیابی سے جاری پی پی 17میں مالی سال 2018-19،20-2019 اور 20-2020 کے دوران 1ارب 81کروڑ 26ہزار روپے کی لاگت سے ترقیاتی منصوبے مکمل کرنے کے ساتھ سالانہ ترقیاتی پروگرام 22-2021 میں مجوزہ کروڑوں روپے کے نئے ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دلائی گئی پنجاب کی جیلوں میں اصلاحات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ جیل خانہ جات کی74سالہ تاریخ میں سیاستدانوں اور جرائم پیشہ افراد کے علاوہ جیلوں کے بارے میں کوئی نہیں جانتا تھا لیکن فیاض چوہان نے پنجاب سمیت ملک بھر کے بچے بچے میں جیلوں کو متعارف کروایا صوبائی وزیر جیل خانہ جات کا قلمدان سنبھالنے کے بعد1سال میں جیلوں میں انقلابی اقدامات پنجاب کی43جیلوں کی تمام کینٹینوں اور پی سی اوز پر اپنا ذاتی نمبر نمایاں جگہوں پر آویزاں کیا تاکہ کوئی بھی قیدی، حوالاتی یا ان کے لواحقین جیل سپرنٹنڈنٹ سے وارڈر تک کسی کے خلاف شکائیت کی صورت میں براہ راست مجھ سے رابطہ کر سکیں انہوں نے کہا کہ گز شتہ ایک دہائی میں جیلوں کے اندر قیدیوں و حوالاتیوں کو غیر معیاری سالن اور چائے کے ساتھ خشک روٹی دی جاتی تھی ہم نے یہاں نطام میں یکسر تبدیلی لا کر آلو کی بھجیا، چنے،پراٹھہ اورحلوے کا مینیو رائج کیا اسی طرح جیلوں میں قیدیوں و حوالاتیوں کے لئے تکئے اور گدے کا کوئی تصور نہیں تھاہم نے جیلوں میں قیدیوں وحوالاتیوں کے آرام کے لئے بستر کا نظام متعارف کروایا انہوں نے کہا کہ جیلوں کے عملے اور قیدیوں و حوالاتیوں کی فلاح و بہبود کے لئے اگرچہ ”پرزنز فاؤنڈیشن“عرصہ سے موجود تھی لیکن فاؤنڈیشن کے اکاؤنٹ میں پونے3ارب روپے کی رقم موجود ہونے کے باوجودوہ عملی طور پرغیر فعال تھی فاؤنڈیشن کے چیئر مین ہوم سیکریٹری پنجاب اورسیکریٹری آئی جی جیل خانہ جات کی سربراہی میں اس فاؤنڈیشن کے باقاعدہ رولز بنا دیئے گئے ہیں فاؤنڈیشن کی رقم کا 50فیصد جیل ملازمین اور50فیصد قیدیوں و حوالاتیوں کی فلاح و بہبود پر خرچ کیا جائے گا جیل کے کسی چھوٹے ملازم سے لیکر اعلیٰ ترین افسر تک کی بیٹی کی شادی پر3لاکھ اور بیٹے کی شادی پر2لاکھ روپے فی کس دیئے جائیں گے جیل کے کسی بھی اہلکار یا افسر کے بچے کے 90 فیصد نمبر آنے پر اسے بلاتفریق مکمل مفت تعلیم فراہم کی جائے گی اسی طرح70اور80فیصد نمبر لینے والے بچوں کی تعلیم کے لئے اس تناسب کے حساب سے مالی معاونت کی جائے گی جبکہ 25سالہ قید کی سزا کے حامل قیدیوں کی بیٹی کی شادی کے لئے بھی1لاکھ روپے فراہم کئے جائیں گے انہوں نے کہا کہ 74سال سے جیل خانہ جات کا محکمہ قائم ہونے اور دیگر فورسز کی طرح ایک فورس کا درجہ ہونے کے باوجود دیگر فورسز کے مقابلے میں تنخواہوں کی شرح انتہائی کم تھی جس پر2ماہ کی ورکنگ، بیوروکریسی کے ہتھکنڈوں اور فنانس ڈیپارٹمنٹ کی رکاوٹوں کے باوجود سکیورٹی الاؤنس کی مد میں بنیادی پے سکیل کو ماہانہ الاؤنس میں شامل کیا گیا ہے جس سے جیل ملازمین کی تنخواہوں میں معقول اضافہ ہو گیا ہے انہوں نے کہا کہ جیلوں میں خواتین قیدیوں اور حوالاتیوں کے لئے ایک اصول وضع کیا گیا ہے کہ کوئی بھی شیر خوار بچہ اپنی ماں کے ساتھ رہے گا اسی طرح کسی بھی جیل ملازم یا افسر کے انتقال کی صورت میں متعلقہ جیل سپرنٹنڈنٹ اور آئی جی جیل خانہ جات 7دن کے اندر پنشن اور واجبات کے کاغذات مکمل کر کے کیس کلیئر کرنے کے ذمہ دار ہوں گے بصورت دیگر ان کے خلاف تادیبی کاروائی کی جائے گی انہوں نے کہا جیل کے ایک اہلکار کا ایسا کیس سامنے آنے آنے پر حکومت نے پہلے ہی 3سپرنٹنڈنٹس اور2ڈپٹی سپرنٹنڈنٹس سمیت10اہلکاروں کے خلاف پیڈا ایکٹ کے تحت کاروائی کا اآغاز کر دیا ہے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نواز شریف پاکستان واپس نہیں آرہے بلکہ ان کے پاسپورٹ کی مدت ختم ہو چکی ہے نواز شریف نے رانا شمیم کا ایشو بھی لندن میں سیاسی پناہ حاصل کرنے کے لئے اٹھایا تھا اب پاسپورٹ کی مدت ختم ہونے پر نواز شریف کو لندن سے نکالا جائے گا اور اگر وہ واپس پاکستان آئے بھی توکسی شان و شوکت سے نہیں آئیں گے بلکہ یہاں کی جیلیں انکا انتظار کر رہی ہیں انہوں نے کہا کہ جیلوں کے ساتھ اپنے حلقے میں انقلابی اقدامات میں کامیابی کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ میں بیوروکریسی یا افسران سے ”نہ“ سننے کا عادی نہیں انہوں نے کہا کہ اپنی 3سالہ کارکردگی پر اظہار تشکر اور آمدہ بلدیاتی انتخابات کے لئے ”عوام رابطہ مہم کے حوالے سے کل (بروز جمعرات)دن01:00بجے ڈھوک کالاخان سے ریلی نکالی جائے گی انہوں نے کہا کہ پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کے موقع پر کے پی کے کی تاریخ نہیں دہرائی جائے گی بلکہ لال حویلی کے ساتھ مل کر باہمی مشاورت اور اتفاق رائے سے بلدیات میں بھی کلین سویپ کریں گے انہوں نے کہا کہ عوام رابطہ مہم کے لئے یہاں مستقل سیکریٹریٹ قائم کر دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ یہ صرف ”پبلک سیکریٹریٹ“ نہیں بلکہ فیاض الحسن چوہان کا”آستانہ عالیہ چوہانیہ“ ہے جہاں سے لال حویلی اور دھمیال ہاؤس کے کارکنان بھی فیض لے کر جاتے ہیں اور میری کوشش ہوتی ہے کہ کسی بھی کام کی غرض سے آنے والا کوئی شہری خالی واپس نہ جائے قبل ازیں حلقہ پی پی 17میں ترقیاتی اقدامات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ انتخابی حلقے میں گیس،بجلی،پانی،سیوریج،گلیوں،نالیوں اور سڑکوں کے علاوہ تعلیم کے شعبے میں مجموعی طور پر 1ارب81کروڑ26ہزار روپے کے منصوبے مکمل کئے گئے انہوں نے کہا کہ 44نئے ٹیوب ویلوں کی تنصیب سے پی پی 17میں آئندہ25سال کے لئے پینے کے صاف پانی کا مسئلہ حل کر دیا گیا ہے ن لیگ کے دور حکومت میں ایک ٹیوب ویل پر90لاکھ روپے خرچ کئے گئے لیکن ٹیوب ویل کی بورنگ بمشکل200سے300فٹ تک کی گئی لیکن ہم نے10سال اسی بجٹ میں 500سے600فٹ گہرائی کی بورنگ میں ٹیوب ویل لگائے گئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔