Official Website

پاک افغان سرحد پر برفانی تودہ گرنے سے 20 افراد جاں بحق

46

کابل: افغانستان سے پاکستان میں داخل ہونے والے 20 افراد برفانی تودے گرنے کے باعث زندگی کی بازی ہارگئے۔

خیال رہے کہ افغانستان سے بڑی تعداد میں شہری روزگار اور اشیائے ضروریہ کی تجارت کے لیے روزانہ کی بنیاد پر غیرقانونی طور پر سرحد پار کر کے پاکستان میں داخل ہوتے ہیں۔

اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق طالبان حکام کا کہنا تھا کہ برفانی تودے کا حادثہ طویل پہاڑی علاقے کی گزرگاہ میں پیش آیا۔

دوسری طرف افغان صوبے کنڑ کے انفارمیشن کے سربراہ کے نجیب اللہ حسن ابدال کی جانب سے تصدیق کرتے ہوئے بتایا گیا ہے کہ ریسکیو کے عملے نے جائے وقوع پر تلاش کا کام جاری رکھا ہوا ہے۔ تاحال 19 لاشیں نکال لی گئی ہیں۔

خیال رہے کہ پاک-افغان سرحد سے غیرقانونی آمد و رفت میں گزشتہ برس اگست میں افغانستان میں طالبان کی واپسی کے بعد اضافہ ہوگیا ہے کیونکہ ملک میں بدترین معاشی بحران کے باعث ہزاروں افراد بے روزگار ہوگئے ہیں۔

دوسری جانب پاکستان 2 ہزار 670 کلومیٹر طویل سرحد باڑ لگا رہا ہے۔

رپورٹس کے مطابق صدیوں سے تاجر اور اسمگلرز ٹیکسوں کی ادائیگی سے بچنے کے لیے دور دراز اور پر خطر پہاڑی گزرگاہ کا استعمال کر رہے ہیں۔ پاک-افغان سرحد کے مذکورہ پہاڑی علاقوں میں برفانی تودے گرنے کے حادثے اکثر پیش آتے ہیں۔

واضح رہے کہ افغانستان میں 2015 میں بدترین برفانی تودے گرنے کا ایک سلسلہ سامنے آیا تھا اور اس کے نتیجے میں 250 سے زائد افراد جاں بحق ہوگئے تھے۔