Official Website

جمہوری حقوق پر ڈاکا ڈالنے والوں کو اب جانا ہی پڑے گا: بلاول

29

گھوٹکی:  پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ملک پر کٹھ پتلی حکومت مسلط ہے، الٹی گنتی شروع ہو چکی، جمہوری حقوق پر ڈاکا ڈالنے والوں کو اب جانا ہی پڑے گا۔

گھوٹکی میں مارچ کے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تاریخ گواہ ہے حقوق کبھی پلیٹ میں رکھ کر پیش نہیں ہوتے، لڑنا پڑتا ہے اور حقوق چھیننے پڑتے ہیں۔ حقوق کے حصول کے لیے جدوجہد، محنت اور قربانیاں دینا پڑتی ہیں۔ جس وقت پیپلز پارٹی کی رہنما فریال تالپور اسلام آباد کے ایک ہسپتال میں تھیں، وہ گھوٹکی میں قومی اسمبلی کی نشست میں حصہ لے رہی تھیں، مشکل وقت میں گھوٹکی کے عوام نے ان کا ساتھ دیا اور پیپلز پارٹی نے یہ نشست جیتی۔ کچھ لوگ چاہتے تھے عمران خان یہ سیٹ جیتیں اور یہ ضمنی انتخابات میں کٹھ پتلی عمران خان کی پہلی شکست تھی۔

پی پی کا کہنا تھا کہ گھوٹکی کے عوام کو کبھی نہیں بھول سکتا جنہوں نے مشکل وقت میں پیپلز پارٹی کا ساتھ دیا۔ وہ ایک بار پھر ایسے وقت میں گھوٹکی آئے ہیں جب ہر شہری اس سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی عمران خان کی پالیسیوں سے پریشان ہے۔ عمران خان تبدیلی کے نام پر پاکستان پر تباہی لے کر آئے ہیں۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی غریب عوام کے حقوق کے لیے بنائی گئی ہے۔ قائداعظم نے مزدور، کاشتکار، طلباء، خواتین اور معاشرے کے ہر طبقے کو حقوق دیے۔ اس نے پاکستان کو ایٹمی صلاحیت دی۔ شہید بینظیر بھٹو نے دو آمروں جنرل ضیاء اور جنرل مشرف کا مقابلہ کیا۔ ان دہشت گردوں کی مخالفت کی جو پاکستان کو تباہ کرنا چاہتے تھے۔ یہ محنت کا نتیجہ تھا آج پاکستان میں جمہوریت ہے۔ حقوق محنت اور قربانیاں مانگتے ہیں۔

پی پی چئیر مین کا کہنا تھا کہ انہیں شہید قائد عوام اور شہید بینظیر بھٹو کے ادھورے مشن کو مکمل کرنا ہے۔ ہمیں آصف علی زرداری کی جدوجہد کو آگے بڑھانا ہے۔ جیالوں کے لانگ مارچ سے وہ کٹھ پتلی جو کہتا تھا مہنگائی عالمی رجحان ہے اور وہ عوام کو ریلیف نہیں دے سکتا وہ پٹرول اور بجلی کی قیمتوں میں کمی پر مجبور ہے، چند روز قبل اس نے پیٹرول کی قیمت میں 12 روپے فی لیٹر اضافہ کیا تھا اور صرف ایک دن پہلے بجلی کے نرخوں میں 6 روپے اضافہ کیا تھا اور پھر اسے بالترتیب 10 اور 5 روپے تک کم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ کٹھ پتلی کا یہ نیا پاکستان مہنگا پاکستان ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں یہ پہلا حکمران ہے جو ٹیلی ویژن پر قوم کے سامنے رویا اور کہا کہ مجھ پر تنقید کی جاتی ہے، میڈیا ہمیشہ حکومت پر تنقید کرتا ہے لیکن یہ کٹھ پتلی حکمران ڈکٹیٹر بننا چاہتا ہے، ہم پیکا قانون کو نہیں مانتے۔ عمران کی الٹی گنتی شروع ہوگئی۔ ہم کٹھ پتلی کو ہٹانے کے لیے اسلام آباد آ رہے ہیں جس نے عوام کے بنیادی انسانی، سیاسی اور معاشی حقوق پر ڈاکہ ڈالا ہے۔ یہ کاشتکاروں کا پانی چوری کرتا ہے۔ کھاد اور یوریا کے کاشتکاروں کو لوٹتا ہے۔ دو وزراء نے گھوٹکی کے کاشتکاروں سے کھاد اور یوریا لوٹ لیا۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جیالے سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی عمران خان پر جمہوری حملہ کرنے اسلام آباد آرہے ہیں۔ منتخب ہونے والے نے عوام کا اعتماد کھو دیا ہے اور وقت آگیا ہے اس کے خلاف پارلیمنٹ میں عدم اعتماد پیش کیا جائے۔ عدم اعتماد سے یہ بے نقاب ہو جائے گا، اس منتخب چور کے ساتھ کون کھڑا ہے اور عوام کے ساتھ کون کھڑا ہے۔ ہم پنجاب میں داخل ہو رہے ہیں اور دم مست قلندر کا وقت آن پہنچا ہے۔